شریعت یا منافقت؟؟


    قارئین میرا موضوع ہر گز سیاسی نہیں بلکہ میں شریعت کے سماجی پہلو کچھ عرض کرنے کی جسارت کرونگا۔ ایک طویل عرصہ سے ملکی میں شرعی نظام کے نفاذ کے مطالبے ہورہے ہیں۔ شور بپا ہے کہ ملکی آئین شریعت سے متصادم ہے اور یہ کہ یہ ملک اسلام کے نام پر بنا تھا اور اس کو حقیقی اسلامی ملک ہونا چاہیے۔ ایسا ملک جہاں کا آئین قرآن و سنت ہو۔ ایسے قوانین کا نفاذ ہو جو قطعی طور پر اسلامی تعلیمات کے مطابق ہوں،یہ اور اس طرح کئی نعرے ملکی منظر نامے میں خاصے مقبول ہو گئے ہیں

    تحریر کا بقیہ حصہ پڑھیں

    31 علماء کا 22 نکاتی ایجنڈا (نفاذ شریعت کی ایک تاریخی دستاویز)



    قارئین ! ہم سب جانتے ہیں کہ پاکستان کے قیام کا مقصد ایک اسلامی ریاست کا قیام تھا۔ اس اسلامی ریاست کی بنیاد ۱۹۴۰ کی وہ قرار داد ہے جسے ’’قراردادِ مقاصد‘‘ کے نام سے جانا جاتا ہے ۔ اس قرار داد کے تحت مسلمانوں نے ایک الگ اسلامی فلاحی ریاست کے قیام کے جدوجہد کی۔ اس جدوجہد کے نتیجے کے طور پر ۱۴ اگست ۱۹۴۷ ء کو پاکستان معرض وجود میں آیا۔قائداعظم ؒ کی قیادت میں ہم نے ایک الگ ملک تو حاصل کر لیا لیکن یہاں پر ایک اسلامی نظام جس کا خواب مسلمانانِ ہند نے دیکھا تھا شرمندہ تعبیر نہ ہو سکا۔

    تحریر کا بقیہ حصہ پڑھیں

    طالبان سے مذاکرت اور ریاست کی ذمہ داری


      آپریشن کر لیں ۔ ۔ ۔ جیٹ طیاروں سے بمباری کر کے جسموں کے چیٹھرے اڑا دیں ۔ ۔ ۔ طالبانائزیشن کو جَڑ سے اُکھاڑدینے کی نیت سے ان کے خلاف 'جہادی عَلم' بلند کر دیجئے ۔۔۔ لیکن مملکتِ پاکستان کی قیادت سے میں یہ پوچھنے میں حق بجانب ہوں ۔
      کیا اس آپریشن سے طالبان ختم ہو جائیں گے؟
      کیا جیٹ طیاروں کی بمباری اس نظریے کو تباہ کر سکتی ہے جو طالبان کے ذہن میں پرورش پارہا ہے؟

      تحریر کا بقیہ حصہ پڑھیں

      واقعہ کربلا اور اور اس کا تقاضہ


        1374  سال سے واقعہ کربلا کے حوالے سے امت کی اکثریت دو انتہاؤں میں پِس رہی ہے ۔۔ لیکن اس وقوعہ کو شعوری طور پر کوئی تسلیم کرنے کو رضامند نہیں ۔   مراد میدان کربلا میں ہونے والے معرکہ میں جگرِ رسول ﷺ اور ان کے اہل و عیال کا حکومتِ وقت کے خلاف سربکف ہوکر نکلنے کا مقصود کیا تھا ؟ وہ کونسے محرکات تھے جس بنا پر سرکارِ دو عالم ﷺ کے نواسہ اقدس حضرت امام حسین رضی اللہ عنہم نے کربلا کے میدان میں خیمہ زن ہوئے ؟

        تحریر کا بقیہ حصہ پڑھیں

        مکئی کی فصل


          مکئی وادی کونش بٹل کی ایک اہم اور معروف فصل ہے مقامی ہندکو  میں مکئی کے بھٹے کو "سلٹہ" کہا جاتا ہے اور پشتوں میں "وگہ/غوگہ" کہلاتا ہے۔ مکئی کی فصل کی بیجائی جون کے اواخر میں کی جاتی ہے ۔۔، زمیندار زمینوں میں زیادہ تر اسی فصل کو کاشت کرتے ہیں کیونکہ یہ فصل گاؤں کی زمین کے لئے بہت موزوں رہی ہے ۔۔۔ مکئی کا کٹائی ستمبر کے اواخر سے شروع ہو کر اکتوبر تک جاری رہتی ہے ۔

          تحریر کا بقیہ حصہ پڑھیں

          سوشل میڈیا اور ایڈمنز ۔۔


            جیسے مملکتِ پاکستان کو جاگیرداروں، وڈیروں، دھشتگردوں، سیاسی بدمعاشوں نے نرغے میں لیا ہوا ہے ٹھیک اسی طرح سوشل میڈیا پر "ایڈمنز" کا قبضہ ہے ۔۔  یہی ہیں جو سوشل میڈیا کے وابسطہ افراد کی ذہنی و فکری تربیت کرتے ہیں۔ ہزاروں لاکھوں لوگوں سے براہ راست Interaction اور فوری نتیجہ کا حصول ۔۔۔ لائکس اور شئرز کی بھوک ۔۔ کامنٹ کا نشہ ۔۔ یہ وہ امور ہے جو ایڈمن میں جوش و جزبہ پیدا کرتے ہیں اور اس کو تحریک فراہم کرتے ہیں ۔ صفحے پر موجود مواد ایڈمن کے رجحان کا عکاس ہوتا ہے ۔

            تحریر کا بقیہ حصہ پڑھیں

            اگلا صفحہ >>>